اگر میں کرکٹ نہ کھیلتا تو میرے پاس دوسری آپشن کیا تھی ؟ جاوید میانداد نے وہ انکشاف کر دیا جس کے بارے میں سب جانا چاہتے تھے

راولپنڈی(ویب ڈیسک) پاکستان کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان جاویدمیانداد ملک میں ہردلعزیز شخصیت ہیں جن کے کرکٹ میدانوں میں کارنامے بھلائے نہیں جاسکتے، کرکٹ ان کا جنون اور پاک فوج ان کی محبت ہے۔راولپنڈی میں نیوز ویب سائٹ سے گفتگو کرتے ہوئے62سالہ جاوید میانداد کا کہنا ہے کہ ان کے دل میں فوج کے لیے بہت محبت

ہے،وہ اگر کرکٹر نہ بنتے تو فوج میں ہی جاتے۔خیال رہے کہ میانداد ان دنوں فوجی کیپ پہنے دکھائی دیتے ہیں۔ اس متعلق استفسار پر انہوں نے کہا کہ پاک فوج کی مکمل حمایت کرتا ہوں اور اسے کو خراج تحسین پیش کرنے کے لیے فوجی کیپ پہنتا ہوں۔ کرکٹ کھیلتے وقت بھی جذبہ فوجی والا ہوتا تھا، میں نے یہ دکھایا کہ ملک کیلئے کیسے لڑا جاتا ہے۔ اس سوال پر انہوں نے یہ کیپ کیا بھارتی کرکٹ کپتان ویرات کوہلی کے بھارتی فوجی کیپ پہننے کے جواب میں پہنی، تو ان کا جواب تھا میں نے کرکٹ کسی کو دیکھ کر نہیں سیکھی۔ان کا کہنا تھا کہ ڈومیسٹک کرکٹ ڈھانچے پر وزیر اعظم عمران خان سے اختلافات ہیں تاہم ان سے بات ہوتی رہتی ہے لیکن اس بار اسلام آباد آمد کے موقع پر ملاقات نہیں ہوئی،وہ پنڈی ٹیسٹ دیکھنے کیلئے بطور مہمان مدعو کرنے پر چیئرمین پی سی بی احسان مانی کے شکرگذار ہیں۔ خیال رہے کہ جاوید میانداد نے گذشتہ روز صدر ڈاکٹر عارف علوی سے ملاقات میں بھی فوجی کیپ سر پر سجا رکھی تھی۔جبکہ دوسری جانب ایک خبر کے مطابق ویسٹ انڈیز کرکٹ ٹیم کے مایہ ناز آل راﺅنڈر ڈووین براوو نے اپنے کرکٹ بورڈ کے روئیے سے تنگ آ کر کیا گیا ریٹائرمنٹ کا اعلان واپس لے لیا ہے اور کہا ہے کہ وہ سلیکشن کیلئے دستیاب ہیں۔ 36 سالہ آل راﺅنڈر نے کہا کہ میں اپنے مداحوں اور خیر خواہوں کیلئے اعلان کرتا ہوں کہ میں ریٹائرمنٹ کا فیصلہ واپس لے رہا ہوں۔یہ کوئی ڈھکی چھپی بات نہیں کہ میں نے ریٹائرمنٹ کا فیصلہ ویسٹ انڈیز کرکٹ بورڈ میں ہونےوالی انتظامی تبدیلیوں کی وجہ سے واپس لیا ہے۔ میں کچھ عرصے سے بین الاقوامی کرکٹ میں واپسی کا سوچ رہا تھا اور انتظامیہ میں مثبت تبدیلیوں نے میرے لئے فیصلہ آسان کر دیا، انہوں نے اس بات کی بھی تصدیق کردی کہ وہ دیگر کسی فارمیٹ میں واپسی کا ارادہ نہیں رکھتے ہیں،ڈوین براوو نے کہا کہ اگر انہیں ویسٹ انڈین ٹیم میں منتخب کیا گیا تو وہ پوری ذمہ داری کے ساتھ ویسٹ انڈیز کیلئے ٹی ٹونٹی کرکٹ میں خدمات کی انجام دہی کریں گے۔ان کا کہنا تھا کہ نوجوان صلاحیت کے ساتھ ویسٹ انڈیز کی نمائندگی ان کیلئے پرجوش تجربہ ہوگا۔یادرہے کہ ڈوین براوو نے ویسٹ انڈیز کرکٹ بورڈ کے سابق صدر ڈیو کیمرون پر کھلاڑیوں کے کیرئیر تباہ کرنے کا الزام عائد کیا تھا جبکہ اس سے قبل ڈوین براوو کی قیادت میں بھارت میں کھیلنے والی ویسٹ انڈیز ٹیم نے بورڈ کیساتھ تنخواہوں کے تنازعہ کے باعث دورہ بھی ادھورہ چھوڑ دیا تھا۔