بریکنگ نیوز: مولانا فضل الرحمٰن کا دھرنا ۔۔۔۔ حکومت نے اداروں کو اب تک کا سب سے بڑا حکم جاری کردیا

اسلام آباد (ویب ڈیسک) جمیعت علماۓ اسلام نے 27 اکتوبر کو اسلام آباد کی طرف مارچ اور دھرنے کا اعلان کیا ہوا ہے۔جمعیت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ مولانافضل الرحمان کا کہنا تھا کہ اسلام آباد جانا ہمارا آخری اور حتمی فیصلہ ہے۔ لیکن دوسری جانب سکیورٹی اداروں نے سکیورٹی خدشات سے حکومت کو آگاہ کر دیا

ہے ۔جبکہ آئی جی اسلام آباد محمد عامر ذوالفقار خان نے بھی جے یو آئی ف کے ممکنہ دھرنے کے پیش نظر اسلام آباد پولیس کی چھٹیاں منسوخ کر دیں ہیں ۔ اور حُکم دیا ہے کہ اہلکار انتہائی ایمرجنسی کی صورت میں ہی چھٹی کر سکیں گے۔تفصیلات کے مطابق آئی جی اسلام آباد آئی جی اسلام آباد محمد عامر ذوالفقار خان نے جے یو آئی ف کے سربراہ مولانا فضل الرحمان کے ممکنہ دھرنے کے پیش نظر اسلام آباد پولیس کی چھٹیاں منسوخ کر دی ہے۔آئی جی آفس کی جانب سے جاری کیے گئے نوٹیفیکیشن میں کہا گیا ہے کہ چھٹیاں منسوخ کرنے کا فیصلہ امن و امان کی صورتحال کو برقرار رکھنے کے لیے کیا گیا ہے۔ اس نوٹیفیکیشن کے مطابق اہلکار انتہائی ایمرجنسی کی صورت میں ہی چھٹی کر سکیں گے۔دوسری جانب وفاقی پولیس نے ممکنہ احتجاج و دھرنے سے نمٹنے کے لئیے تیاریاں شروع کر دیں ہیں اور اسلام آباد پولیس نے دوسرے صوبوں سے بھی بیس ہزار پولیس کی نفری طلب کر لی ہے۔ترجمان اسلام آباد پولیس کا کہنا ہے کہ رواں ماہ ممکنہ احتجاج سے نمٹنے کے لئے اہلکاروں کی ٹریننگ بھی روزانہ کی بنیاد پر جاری ہے۔اور دارلحکومت کا امن و امان خراب کرنے کی اجازت کسی بھی طور پر نہیں دی جائے گی ۔ اینٹی رائٹ یونٹ کا پولیس لائن ہیڈ کوارٹرز میں دو شفٹوں میں ٹریننگ سیشن جاری ہیں۔ اس حوالے سےجوانوں نے مجمع کو کنٹرول کرنے کی مشقیں کیں۔پولیس افسران نے ہدایات جاری کی ہیں کہ جلوس و دھرنے میں اپنی حفاظت کو یقینی بنائیں جبکہ تھانے میں صرف محرر سنتری اور ڈپٹی افسر دستیاب ہوں گے۔یاد رہے جمعیت علمائے اسلام (ف) کی جانب سے 27 اکتوبر کو ڈی چوک میں آزادی مارچ کیلئے درخواست دے دی گئی ہے۔گذشتہ روز بھی اسلام آباد ہائی کورٹ میں دھرنے کے خلاف درخواست پر پہلی سماعت ہوئی تھی۔ جس میں عدالت نے انتظامیہ کو امن و امان برقرار رکھنے کا حکم دیا ہے اور کہا کہ جب تک ضلعی مجسٹریٹ سے دھرنےکی اجازت نہیں لیں گے تو جے یو آئی کو دھرنے کی اجازت نہیں ملے گی۔