سانحہ چونیاں ۔۔۔ پورے شہر کے مردوں کے ڈی این اے ٹیسٹ پر کتنے کروڑ روپے خرچ آئے؟ پنجاب حکومت کے ہوش اڑا دینے والی خبر

لا ہو ر (ویب ڈیسک )چونیاں کیس میں ڈی این اے کے معاملے پر فرانزک سائنس ایجنسی نے پنجاب حکومت سے 10کروڑ روپے مانگ لئے ، ایجنسی ذرائع کے مطابق پنجاب پولیس 1200 افراد کا ڈی این اے کر انا چاہتی ہے ، اتنی بڑی تعداد میں ٹیسٹ کیلئے ایجنسی کے پاس فنڈز نہیں ، ایجنسی نے

اپنی درخواست محکمہ داخلہ پنجاب کو ارسال کر دی ، محکمہ داخلہ نے فنڈز جاری کرنے کی سفارشات کے ساتھ درخواست پنجاب حکومت کو ارسال کردی ۔ چونیاں میں بچوں سے زیادتی اور قتل میں مبینہ طور پر ملوث مرکزی ملزم محمد شہزاد کی بدھ اور جمعرات کی درمیانی شب رحیم یار خان سے گرفتاری بارے سنسنی خیز انکشافات ہوئے ہیں۔ معلوم ہوا ہے کہ ملزم کے دوست محمد حنیف جس کے گھر شہزاد نے پناہ لے رکھی تھی، نے مبینہ طور پر 25 لاکھ انعام کی لالچ میں مخبری کر کے اسے گرفتار کروانے میں مدد کی۔ ذرائع کے مطابق اس واقعہ میں مبینہ طور پر ملوث محمد شہزاد نامی ملزم کے ہمراہ دیگر 3 ملزمان کو بھی رحیم یار خان کے نزدیک واقع قصبہ امین آباد (مدینہ ٹائون) سے پولیس کی بھاری نفری اور ایلیٹ فورس نے بدھ اور جمعرات کی درمیانی شب گرفتار کیا ہے، جنہیں فوری طور پر سخت حفاظتی اقدامات میں قصور پہنچا دیا گیا ہے۔ معلوم ہوا ہے کہ ڈی این اے ٹیسٹ سے بچنے کیلئے مبینہ مرکزی ملزم شہزاد نے دیگر تین ملزمان کے ہمراہ امین آباد میں اپنے ایک دوست محمد حنیف کے گھر کئی دنوں سے پناہ لے رکھی تھی۔ گزشتہ روز قائم مقام ڈی پی او زاہد نواز مروت نے سجاد احمد کی گرفتاری کی تصدیق کی تاہم انہوں نے کہا کہ اسکا ڈی این اے ٹیسٹ مکمل ہونے کے بعد ہی واقعہ میں ملوث ہونے یا نہ ہونے بارے تصدیق کی جائے گی۔ معلوم ہوا ہے ملزم ٹریکٹر ٹرالی ڈرائیور ہے۔ گرفتاری کی خبروں پر اس کے اہل خانہ بھی گھر کو تالا لگا کر غائب ہو چکے ہیں۔ دریں اثناء نواحی گاوں نین وال میں تین ماہ قبل اغوا کے بعد زیادتی کا نشانہ بننے والے دس سالہ بچے عبدالرحمن کے قاتل کی عدم گرفتاری پر ورثاء کا کچہری چوک قصور میں احتجاج۔ تین ماہ قبل بد فعلی کا نشانہ بنانے کے بعد بچے کی نعش گائوں کے قریب ہی پھینک دی گئی۔ پولیس کی ننھے بچے عبدالرحمن کے قاتل کی گرفتاری میں ناکامی پر ورثاء اور اہل علاقہ کے سو سے زائد افراد نے قصور کچہری چوک پہنچ کر ٹائر جلاکر احتجاج کیا جس سے ٹریفک بلاک ہوگئی۔ علاوہ ازیں گزشتہ روز نواحی علاقہ بڈھا سنگھ والا سے ایک اور بچہ اغوا کر لیا گیا۔ رمضان نے پولیس تھانہ تھہ شیخم میں بھی مقدمہ درج کروایا ہے پندرہ سالہ بیٹے نعمان کو ملزم جمیل اپنے ساتھ نارووال لے گیا اور وہاں چودھری انور نامی شخص کے ڈیرے میں بھینسوں کو چارہ ڈالنے کیلئے وہاں پر چھوڑ کر خود واپس آ گیا۔ پولیس نے مقدمہ درج کرکے تفتیتش شروع کر دی۔