جنرل باجوہ سے گلے ملنا ایک پل تھا، لکڑی کی ہانڈی دوبارہ نہیں چڑھتی: نوجوت سنگھ سدھو

ممبئی (ویب ڈیسک) بھارت کے وزیراور وزیراعظم عمران خان کے دوست نوجوت سنگھ سدھو عمران خان کے وزارت عظمیٰ کاحلف اٹھانے کی تقریب میںشرکت کے لیے آئے جس دوران انہیں پاک فوج کے سربراہ جنرل قمر جاوید باجوہ نے گلے لگالیا تھا ، گلے ملنے پر بھارت میں ہنگامہ برپا ہوگیا تھا اورکرتارپورراہداری منصوبے کے

 

سنگ بنیاد کی تقریب کے لیے دوبارہ پاکستان آنے کے بعد واپس بھارت پہنچے توسدھو سے  ٹی وی چینل بھارت تک کی خاتون اینکر نے استفسا رکیا کہ دوبارہ جنرل باجوہ سے گلے ملنے کا موقع ملاتو آپ گلے ملیں گے؟جس پر سدھو کاکہناتھاکہ جنرل باجوہ سے گلے ملاتھا اور انہوں نے آکرکہاتھاکہ گرونانک دیوجی کا لانگھاکھولنا چاہتے ہیں جو کروڑوں لوگوں کی خواہش تھی لیکن کیا اس وقت وہ گلے ملنے آتے تو میں پیٹھ کرکے کھڑا ہوجاتا؟ سدھونے بتایاکہ میرے ساتھ مہتاجی بھی تھے اور میں اپنے وطن کی خاطر گیاتھا ،یہ بتائیں کہ میچ کے دوران اگر عمران خان ہاتھ ملانے آتا تو کیاہم پیٹھ کرکے کھڑے ہوجاتے، بات کا بتنگڑ بن گیالیکن وہ رافیل ڈیل نہیں تھی ، محض ایک سیکنڈ کی جپھی تھی ۔

دوبارہ موقع ملنے پر گلے ملنے سے متعلق سوال پر سدھو کاکہناتھاکہ وہ جذبات تھے ، وہ ایک پل تھا،مودی جتنی مرضی تہمتیں لگواتے رہے ، سچ ہضم کرکے لوگوں کو ڈرانا دھمکاناچھوڑیں، گولیاں چلانا بند کریں۔