چین میں خوف کے سائے منڈلانے لگے ……! میتوں‌کی آخری رسومات کی ادائیگی پر پابندی عائد

بیجنگ (ویب‌ڈیسک ) چین میں کورونا وائرس سے مرنے والے شخص کی آخری رسومات ادا کرنے پر پابندی عائد کردی گئی ہے جس میں مرنے والے کے دوست اور احباب تعزیت کے لیے شرکت کرتے ہیں غیر ملکی میڈیا کے مطابق چین کے نیشنل ہیلتھ کمیشن (این ایچ سی) نے ایک نیا قانون جاری کیا گیا ، این ایچ سی کے اعلامیے میں بیان کیا گیا کہ کورونا وائرس سے ہلاک ہونے والے شخص کی الوداعی یا آخری رسومات ادا نہیں کی جائیں گی۔اعلامیے

میں کہا گیا کہ یہ فیصلہ چین میں کورونا وائرس سے ہلاکتوں میں اضافے اور وائرس کے تیزی سے پھیلاؤ کے پیشِ نظر کیا گیا ہے۔این ایچ سی کے مطابق اگر کورونا وائرس سے متاثرہ کوئی شخص مر جاتا ہے تو جلد از جلد اس کی تدفین کی جائے۔مزید پڑھئیے :: بیجنگ(ویب ڈیسک ) چین میں کورونا وائرس کے بعد برڈ فلو کا پہلا کیس سامنے آگیا ہے ۔ چین کی وزارت زراعت کے مطابق چین کے صوبے ہنان کے قصبے شائویانگ میں مرغیوں کے فارم میں برڈ فلو کا پہلا کیس سامنے آ یا ہے جس میں ایچ۔ 5 این۔1 برڈ فلو کی تصدیق ہوئی ہے۔فارم میں موجود 4500مرغیاں برڈ فلو سے مر گئیں ہیں جبکہ 17ہزار سی828 مرغیاں تلف کردی گئی ہیں۔ حکام کے مطابق ایچ۔5 این۔1برڈ فلو 2009 سے 2010 اور 2013سے 2014کے دوران سامنے آیا تھا۔ ایچ۔5 این۔1برڈ فلو سے دنیا بھر میں درجنوں افراد ہلاک ہوگئے تھے۔عالمی برادری برڈ فلو پھیلنے سے پہلے روکنے میں کامیاب ہوگئی تھی تاہم اسے دوبارہ ختم کرنے کے لئے بھر پور کوششیں شروع کر دی گئی ہیں۔