چین میں خوف کے سائے۔۔۔۔۔ ؟ مزید درجنوں زندگیاں نگل لی گئیں

بیجنگ(ویب ڈیسک ) چینی محکمہ صحت نے تصدیق کی ہے کہ وسطی صوبے وٴْوہان میں نمونیے کا باعث بننے والے نئے وائرس کے مزید مریضوں کو ہسپتال پہنچایا گیا ہے۔ اب تک اس وائرس میں مبتلا ہونے والے دو چینی مریض ہلاک ہو چکے ہیں۔غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق وٴْوہان کے حکام نے بتایا کہ نئے مریضوں کی حالت فی الحال مستحکم ہے۔

اس وبا کے پھیلنے سے اس وقت ہسپتال میں پچاس افراد نمونیے میں مبتلا ہیں۔ اسی وائرس کی نشاندہی تھائی لینڈ اور جاپان میں دو افراد میں بھی کی جا چکی ہے۔ عالمی ادارہ صحت نے متنبہ کیا کہ یہ نیا وائرس وبائی صورت میں کئی اور علاقوں میں پھیل سکتا ہے۔ یہ انتباہ ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب اگلے ہفتے لاکھوں چینی شہری نئے سال کی تعطیلات منانے کے لیے آبائی علاقوں اور بیرون ملک سفر اختیار کریں گے۔ چینی محکمہ صحت نے تصدیق کی ہے کہ وسطی صوبے وٴْوہان میں نمونیے کا باعث بننے والے نئے وائرس کے مزید مریضوں کو ہسپتال پہنچایا گیا ہے۔ اب تک اس وائرس میں مبتلا ہونے والے دو چینی مریض ہلاک ہو چکے ہیں۔غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق وٴْوہان کے حکام نے بتایا کہ نئے مریضوں کی حالت فی الحال مستحکم ہے۔ اس وبا کے پھیلنے سے اس وقت ہسپتال میں پچاس افراد نمونیے میں مبتلا ہیں۔ اسی وائرس کی نشاندہی تھائی لینڈ اور جاپان میں دو افراد میں بھی کی جا چکی ہے۔ عالمی ادارہ صحت نے متنبہ کیا کہ یہ نیا وائرس وبائی صورت میں کئی اور علاقوں میں پھیل سکتا ہے۔ یہ انتباہ ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب اگلے ہفتے لاکھوں چینی شہری نئے سال کی تعطیلات منانے کے لیے آبائی علاقوں اور بیرون ملک سفر اختیار کریں گے۔ چینی محکمہ صحت نے تصدیق کی ہے کہ وسطی صوبے وٴْوہان میں نمونیے کا باعث بننے والے نئے وائرس کے مزید مریضوں کو ہسپتال پہنچایا گیا ہے۔ اب تک اس وائرس میں مبتلا ہونے والے دو چینی مریض ہلاک ہو چکے ہیں۔غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق وٴْوہان کے حکام نے بتایا کہ نئے مریضوں کی حالت فی الحال مستحکم ہے۔