مودی منہ چھپانے پر مجبور ۔۔۔ اہم ترین اسلامی ملک کا دورہ اچانک منسوخ ، وجہ سامنے آگئی

نئی دہلی (ویب ڈیسک) مقبوضہ کشمیر میں مظالم نے بھارت کو عالمی برادری سے چہرہ چھپانے پر مجبور کردیا، نریندر مودی نے اہم ترین اسلامی ملک کا دورہ منسوخ کردیا۔ بھارتی وزیراعظم کو دو روزہ دورے پر ترکی جانا تھا جہاں ان کی ترک صدر رجب طیب اردوان سے ملاقات ہونی تھی۔

لیکن ترک صدر کی جانب سے اقوام متحدہ میں کشمیریوں کی واضح حمایت نے بھارت کو شرمندگی سے دوچار کردیا ہے۔ ایف اے ٹی ایف میں ترکی کی جانب سے پاکستان کی حمایت نے بھارت کو مزید تنہا کردیا، بھارتی وزیراعظم کے لیے اس صورتحال میں دورہ ترکی خطرناک ثابت ہوسکتا تھا، مودی کو خطرہ تھا کہ کہیں ترک صدر ان کے سامنے بھی مسئلہ کشمیر نہ اٹھا دیں، اس لیے بھارتی وزیراعظم نے اپنا دورہ ترکی منسوخ کر دیا۔ دوسری طرف بتایا جا رہا ہے کہ ہندوستان کے وزیراعظم نے شمالی شام پر ترکی کے حملے پر اعتراض کرتے ہوئے اپنا دورہ انقرہ منسوخ کردیا ہے۔ ہندوستانی ذرائع ابلاغ کے مطابق وزیراعظم نریندر مودی کا دورہ انقرہ شام پر ترک فوج کے حملوں کے باعث منسوخ کیا گیا ہے۔ادھر ہندوستان کے وزیرخارجہ جے شنکر نے وزیراعظم نریندر مودی کے مجوزہ دورہ ترکی منسوخ کیے جانے کی تصدیق کرتے ہوئے کہا ہے کہ یہ دورہ سرکاری طور پر طے نہیں پایا تھا۔ ہندوستانی ذرائع کے مطابق وزیراعظم نریندر مودی رواں ماہ کے دوران ترکی کا دو روزہ سرکاری دورہ کرنے والے تھے۔وزیراعظم نریندر مودی نے اس سے پہلے سن دوہزار پندرہ میں گروپ بیس کے اجلاس میں شرکت کی غرض سے ترکی کا دورہ کیا تھا۔ خیال رہے کہ مودی نے آخری بار 2015 میں بھارت میں ہونے والی جی 20 کے دوران ترکی کا دورہ کیا تھا۔ انہوں نے رواں سال جون میں جی 20 کے موقع پر ، اوساکا میں اردگان کے ساتھ باہمی ملاقات کی تھی۔جب کہ ترک رہنما جولائی 2018 میں دو روزہ دورہ پر بھارت آئے تھے۔