گاڑیوں کے شوقین حضرات کے لیے بڑی خوشخبری ۔۔۔ ملائیشیا کے بعد جرمنی کی مشہور آٹو کمپنی ‘ واکس ویگن ‘ نے پاکستان کے لیے بڑا اعلان کر دیا، شاندار خبر

جرمنی (نیوز ڈیسک) جرمنی کی مشہور آٹو کمپنی واکس ویگن نے پاکستان میں 135 ملین کی سرمایہ کاری کرنے کا فیصلہ کر لیا ہے۔ تفصیلات کے مطابق واکس ویگن پاکستان کی ایک مقامی کمپنی کے ساتھ مل کر پاکستان میں پلانٹس لگائے گی۔ وزارت برائے صنعت و پیداوار کے حکام کے مطابق

حکومت نے حال ہی میں کراچی کی ایک کمپنی پریمئیر موٹر لمیٹڈ کو واکس ویگن کے ساتھ ہوئے معاہدے کی روشنی میں گاڑیوں کی مینوفیکچرنگ اور اسمبلنگ کے لیے کیٹگری اے گرین فیلڈ انوسٹمنٹ اسٹیٹس سے نوازا ہے۔کمپنی کا پلانٹ بلوچستان میں لگایا جائے گا جس کے لیے زمین پہلے ہی خرید لی گئی ہے۔ اب جب کہ کمپنی کو اسٹیٹس سے نواز دیا گیا ہے لہٰذا پلانٹ پر کام جلد شروع کر لیا جائے گا۔ یہ پلانٹ 2021ء میں فعال ہو گا جو ابتدائی طور پر وین اور ڈل کیبن گاڑیاں تیار کرے گا۔انجینئیرنگ ڈیولپمنٹ بورڈ کے ڈپٹی جنرل مینجر عاصم ایاز نے بھی اس بات کی تصدیق کر دی ہے کہ حکومت کی جانب سے پریمئیر موٹر لمیٹڈ کوکیٹگری اے گرین فیلڈ انوسٹمنٹ اسٹیٹس سے نواز دیا گیا ہے جو اس وقت ملک میں آڈی (Audi ) گاڑیوں کا واحد ڈسٹری بیوٹر ہے۔واضح رہے کہ جرمنی کی آٹو کمپنی واکس ویگن نے پاکستان میں موجود اپنے مقامی شراکت دار پریمئیر موٹرز لمیٹڈ کے ساتھ ایک معاہدے پر دستخط گذشتہ برس کیے تھے۔ اس معاہدے میں طے پایا تھا کہ پریمیئر موٹرز واکس ویگن کے لائسنس کے تحت CKD یونٹس کی مقامی سطح پر تیاری کے لیے ایک پروڈکشن پلانٹ قائم کرے گی۔ یہ خبر ملک بھر کے آٹو سیکٹر میں جنگل کی آگ کی طرح پھیل گئی کیونکہ واکس ویگن کا شمار دنیا بھر کی بڑی آٹو کمپنیوں میں ہوتا ہے۔یہاں یہ بات قابل ذکر ہے کہ اس سے قبل جون 2017ء میں پہلے ہی دو کمپنیاں intent (LOI) کا معاہدہ کر چکی ہیں۔ جس کے بعد سے ملک کے آٹو سیکٹر میں جرمنی کی سب سے بڑی آٹو کمپنی کی انٹری کا بے صبری سے انتظار کیا جا رہا تھا۔ ایک سال سے زائد عرصہ کے انتظار کے بعد بالآخر جرمن کمپنی نے پاکستان میں سرمایہ کاری اور اپنے آٹو پارٹس پاکستان لانے کا فیصلہ کیا۔جرمن آٹو کمپنی کی پاکستان آمد کے بعد ملکی معیشت میں بھی بہتری آنے کا امکان ہے۔ جبکہ جرمن کمپنی کی پاکستان میں سرمایہ کاری سے آٹو انڈسٹری کی کمپنیوں کے مابین مقابلہ پہلے سے زیادہ بڑھنے کا امکان ہے۔ ملک میں گاڑیاں خریدنے کے خواہشمند افراد کے لیے اب کئی آپشنز موجود ہوں گی جس پر وہ غور کر سکیں گے اور فیصلہ کر سکیں گے کہ آخر انہیں کس کمپنی اور کس نوعیت کی گاڑی چاہئیے۔ جرمن کمپنی کی پاکستان آمد کے بعد گاڑیوں کی ورائٹی اورگاڑیوں میں نصب ٹیکنالوجی میں بھی جدت دیکھنے میں آئے گی یہی نہیں بلکہ ملکی معیشت میں بھی بہتری آنے کا قوی امکان ہے۔