بریکنگ نیوز : وزیراعلیٰ سندھ مراد علی شاہ کی گرفتاری ۔۔۔۔۔ ملکی سیاست میں ہلچل مچا دینے والی خبر آگئی

اسلام آباد(ویب ڈیسک) پاکستان پیپلزپارٹی کے رہنما نبیل گبول نے کہا کہ وزیراعلیٰ سندھ مراد علی شاہ کو گرفتار کرنے کی تیاریاں جاری ہیں اور سننے میں آیا ہے کہ جمعے کو حراست میں لیا جائے گا۔ہم نیوز کے پروگرام’ندیم ملک لائیو‘ میں انہوں نے کہا ایک خبر یہ بھی ہے کہ مرادعلی شاہ کو سندھ سے

باہر اسلام آباد سے گرفتار کیا جائے گا۔پیپلزپارٹی رہنما نے کہا حکومت کی توجہ سیاسی مخالفین کو جیل میں ڈالنے پر ہے اور اس مقصد کے لیے معیشت کو بھی خطرے میں ڈال دیا گیا ہے۔نبیل گبول نے وزیراعلیٰ سندھ کی گرفتاری سے متعلق کوئی تاریخ نہیں بتائی۔پاکستان تحریک انصاف کی رہنما ملیکہ بخاری نے کہا کہ مراد علی شاہ کی گرفتاری سے متعلق وہ کچھ نہیں کہہ سکتیں لیکن اتنا ضرور بولیں گی وزیراعلیٰ سندھ پر اومنی گروپ کیس میں ملوث ہونے کا الزام ہے۔ان کا کہنا تھا کہ قانون کا بلاتفریق اطلاق ہی ریاست مدینہ کی بنیاد ہے اور حکومت ہر صورت ایسا کرے گی۔ملیکہ بخاری کا کہنا تھا کہ ہم کسی کو سیاسی انتقام کا نشانہ نہیں بنا رہے بلکہ ملک میں پہلی بار قانون کا یکساں اطلاق کر رہے ہیں۔پی ٹی آئی رہنما کا کہنا تھا کہ حکومت کا مقصد سیاسی مخالفین کو جیل میں ڈالنا نہیں بلکہ بلا تفریق احتساب کرنا ہے۔انہوں نے کہا کہ اگر کسی حکومتی وزیریا مشیر پر کرپشن کا الزام لگا تو اس کیخلاف بھی قانون کے مطابق کارروائی عمل میں لائی جائے گی۔یاد رہے پاکستان میں منی لانڈرنگ اور جعلی بینک اکاؤنٹس کیس کی تحقیقات میں عدم تعاون پر وزیر اعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ کو سپریم کورٹ نے طلب کیا تھا۔ چیف جسٹس نے مسلسل عدم تعاون پر وزیر اعلیٰ سندھ کو چیمبر میں پیش ہونے کی ہدایت کی۔ چیف جسٹس آف پاکستان نے ریمارکس دیے کہ ’’منی لانڈرنگ اہم معاملہ ہے۔ وزیر اعلیٰ سندھ سے کہیں آج ہی آ کر ملیں۔ اس طرح کام

نہیں چلے گا۔وہ اس مسئلے پر کسی کو نہیں بخشیں گے۔تحقیقات کے لئے قائم مشترکہ تحقیقاتی ٹیم کے افسران نے عدالت میں پیش ہو کر رپورٹ جمع کرائی کہ صرف عدالتی مداخلت پر ہی بعض دستاویزات مل رہی ہیں۔کیس کی سماعت کے دوران جے آئی ٹی نے اپنی نئی پیش رفت رپورٹ بھی عدالت میں پیش کی جس کے مطابق، اومنی گروپ پر مجموعی طور پر 73 ارب روپے کا قرضہ ہے، نیشنل بینک کے 23 ارب جبکہ سمٹ، سندھ اور سلک بینک کے 50 ارب روپے ہیں۔ چیف جسٹس نے ریمارکس دیے اسی لیے بینکوں کا انضمام کیا جارہا تھا۔ عدالت نے ڈی جی ایف آئی اے اور جے آئی ٹی سربراہ سے کہا کہ آپ کو مکمل آزادی ہے، جہاں جانا چاہتے ہیں جائیں اور اس پر کام کریں۔عدالت نے سندھ کے تمام محکموں کو جے آئی ٹی سے مکمل تعاون کا حکم دیا ہے۔ دوسری جانب وزیر اعلیٰ سندھ کی بھٹ شاہ میں صوفی بزرگ شاہ عبدالطیف بھٹائی کے عرس میں شرکت کے باعث آج عدالت میں پیش نہ ہو سکے۔ اب تک کی تحقیقات کے مطابق جعلی بینک اکاؤنٹس سے اب تک 47 ارب روپے کی ٹرانزیکشنز سامنے آئی ہیں اور 36 بے نامی کمپنیوں سے مزید 54 ارب روپے منتقل کیے گئے۔ اومنی گروپ کی متعدد کمپنیاں بھی کیس سے منسلک ہیں۔وفاقی تحقیقاتی ادارے کی جانب سے 6 جولائی کو حسین لوائی سمیت 3 اہم بینکروں کو منی لانڈرنگ کے الزامات میں گرفتارکیا گیا تھا۔ کیس میں سابق صدر آصف علی زرداری سمیت دو درجن سے زائد ملزمان نامزد ہیں۔ایک اور کیس میں سپریم کورٹ نے کراچی میں تجاوزات کے خاتمے کے لئے تمام بلدیاتی اداروں بشمول کنٹونمنٹ بورڈز کے مشترکہ ٹیم بنانے کا حکم دے دیا۔ چیف جسٹس نے میئر کراچی وسیم اختر پر تجاوزات کے خاتمے کے لئے اقدامات میں سستی پر برہمی کا اظہار کیا۔ اس موقع پر میئر کراچی نے وسیم اختر نے شکوہ کیا کہ میرے پاس اختیارات نہیں ہیں۔