بیرون ملک پڑے پانچ ارب ڈالر ۔۔۔۔۔ شبر زیدی نے قوم کو بڑی بریکنگ نیوز دے دی

اسلام آباد (ویب ڈیسک)چیئرمین ایف بی آرشبرزیدی نے کہا ہے کہ 378 پاکستانیوں کی بیرون ملک پانچ ارب ڈالرمالیت کے اثاثوں کا سراغ لگایا گیا ہے،247افراد کے کیسزکمشنرکوتحقیقات کیلئے بھجوائے گئے ہیں جن پراکتوبر کے آخرتک فیصلہ کردیا جائیگا۔ اسد عمرکی زیرصدارت ہونے والی قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی خزانہ کوچیئرمین ایف بی آرشبر زیدی نے بتایا

کہ گذشتہ سال اٹھائیس ممالک سے پاکستانیوں کیاثاثوں کی تفصیلات فراہم کیں جبکہ اس سال اسی ممالک سے معلومات ملیں گی انھوں نے بتایا کہ متحدہ عرب امارت سے مکمل معلومات حاصل نہیں ہوسکیں تاہم کوشش کی جا رہی ہے کہ اقامہ رکھنے والوں کی مکمل معلومات حاصل کی جا سکیں انھوں نے بتایا کہ مجموعی طورپر ایک ہزارنوسو اسی افراد کے غیرملکی اثاثہ جات کی معلومات ملیں تاہم ان میں سے 378افراد ایسے ہیں جن کہ بینک اکاونٹس میں دس لاکھ ڈالرسے زائد مالیت کی رقم تھی جس پران افراد کیخلاف تحقیقات شروع کی گئیں۔انھوں نے کہا کہ کئی افراد نے ٹیکس ایمنسٹی اسکیم سے فائدہ اٹھا لیا اورنواگست تک جو لوگ گوشوارے نہیں جمع کروائیں گے ان کو نوٹس جاری کیے جائیں گے۔کمیٹی نے زرعی پیداوار بڑھانے کیلئے زرعی تحقیق کیلئیپانچ ارب روپے کا فنڈ قائم کرنے کی سفارش کی کمیٹی نے کھاد پرگیس سیس ختم کرنیکی تجویزپرجلد فیصلہ کرنے کی بھی ہدایت کی۔واضح رھے پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) اور پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) نے ایک دوسرے کی اعلیٰ سیاسی قیادت پر اثر و رسوخ کی وجہ سے شوگر ملز مالکان کو قیمتوں کے طریقہ کار میں تحفظ دینے اور اس حوالے سے جوڑ توڑ کرنے کا مورد الزام ٹھہرایا۔اس کے ساتھ پاکستانیوں کے بیرونِ ملک چھپائے گئے 200 ارب ڈالر کی انتہائی سطح سے کم ہو کر 5 سے 7 ارب ڈالر ہوچکی ہے۔میڈیا کی رپورٹ کے مطابق قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے خزانہ کے اجلاس میں ان دونوں جماعتوں کے اراکین کے مابین گرما گرمی دیکھنے میں آئی تھی اس موقع پر فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) کے چیئرمین شبر زیدی اور انٹرنیشنل ٹیکسز کے سربراہ اشفاق احمد نے بتایا کہ پاکستان کو آرگنائزیشن برائے اقتصادی تعاون اور ترقی (او ای سی ڈی) کے سمجھوتے کے تحت41 ممالک سے پاکستانیوں کے بیرونِ ملک موجود اثاثوں کی تفصیلات موصول ہوچکی ہیں۔چیئرمین ایف بی آر نے بتایا کہ حکومت 31 دسمبر تک اس قسم کا ڈیٹا 80 ممالک کے ساتھ شیئر کرسکے گی، ان کے مطابق بیرونِ ملک اثاثوں کے حامل 378 پاکستانی ایسے ہیں جن کے غیر ملکی اثاثوں کی مالیت 5 ارب ڈالر یا مجموعی دولت کا تقریباً 78 فیصد ہے جو تقریباً 7 ارب ڈالر ہوگی۔جس پر ان افراد کے خلاف کارروائی کے حوالے سے پوچھا تو شبر زیدی نے بتایا کہ 378 میں سے 115 افراد نے گزشتہ برس جبکہ 72 افراد نے رواں برس ایمنسٹی اسکیم سے فائدہ اٹھایا، مزید 19 کیسز ایک ارب 64 کروڑ کے ٹیکس مطالبے کے جواب میں 80 کروڑ 88 لاکھ کی ادائیگی پر ختم کردیے گئے۔