Categories
دلچسپ اور حیران کن معلومات

وہ گاڑی جو دنیا کے لیے پیٹرول کی کمی کا حل ثابت ہوگی

لاہور: (ویب ڈیسک) دنیا بھر میں پیٹرول کی قیمتوں میں 2022 کے دوران ریکارڈ اضافہ دیکھنے میں آیا اور اس کا حل سولر گاڑیوں کی شکل میں سامنے آیا ہے۔ پہلے تو سولر انرجی پر چلنے والی گاڑیاں سائنس فکشن تک محدود تھیں مگر 2022 میں وہ حقیقت بن گئیں۔ ڈچ کمپنی لائٹ ائیر نے سولر

تفصیلات کے مطابق دنیا بھر میں پیٹرول کی قیمتوں میں 2022 کے دوران ریکارڈ اضافہ دیکھنے میں آیا اور اس کا حل سولر گاڑیوں کی شکل میں سامنے آیا ہے۔ پہلے تو سولر انرجی پر چلنے والی گاڑیاں سائنس فکشن تک محدود تھیں مگر 2022 میں وہ حقیقت بن گئیں۔ ڈچ کمپنی لائٹ ائیر نے سولر انرجی پر چلنے والی پہلی گاڑی لائٹ ائیر 0 متعارف کرائی تھی جو کچھ صارفین کو ڈیلیور بھی کردی گئی ہے۔ اگرچہ ابھی یہ گاڑی بہت کم افراد کو دستیاب ہے مگر کمپنی نے اس کے نئے ورژن پر بھی کام بھی شروع کردیا ہے۔ لاس ویگاس میں کنزیومر الیکٹرونکس شو کے دوران کمپنی نے نئے ماڈل لائٹ ائیر 2 کی ویٹ لسٹ اوپن کرنے کا اعلان کیا۔ کمپنی نے بتایا کہ یہ گاڑی سورج کی روشنی سے زیادہ فاصلے تک سفر کرسکے گی۔ خیال رہے کہ لائٹ ائیر 0 مکمل طور پر سولر انرجی پر نہیں دوڑتی۔ اس گاڑی کی چھت پر 54 اسکوائر فٹ پر سولر پینلز لگے ہوئے ہیں جن کی مدد سے یہ گاڑی روزانہ 45 میل کا فاصلہ طے کرسکتی ہے جبکہ اس کے اندر نصب بیٹری کو مدنظر رکھا جائے تو یہ 390 میل تک کا سفر کرسکتی ہے۔ مگر یہ جدید ٹیکنالوجی سستی نہیں اور اس گاڑی کی قیمت 3 لاکھ ڈالرز کے قریب ہے۔ مگر کمپنی کا کہنا ہے کہ گاڑی کے نئے ماڈل کی قیمت 40 ہزار ڈالرز سے بھی کم ہوگی اور یہ متوسط طبقے کو مدنظر کر تیار کی جارہی ہے۔ اس گاڑی کی تیاری 2025 میں شروع ہونے کا امکان ہے۔