Categories
اسپیشل سٹوریز منتخب کالم

سردی میں فل گرما گرم ماحول!! عمران اور بشریٰ کی آڈیوز کے بعد پرویزالٰہی کی آڈیوز کی گونج

اسلا م آباد(ویب ڈیسک) سابق وزیراعظم عمران خان کی دو خواتین کے ساتھ نازیبا آڈیو گفتگو سامنے آنے کے بعد اب پنجاب میں ان کے دست راست وزیر اعلیٰ چودھری پرویز الٰہی کی بھی ایک خاتون کیساتھ گندی آڈیو گفتگو پکڑے جانے کی خبر سامنے آ گئی ہے جس کا انکشاف معروف صحافی عمران شفقت نے کیا ہے۔ اپنے سیاسی مخالفین کو ووٹ دینے والوں

کیخلاف دائرہ اسلام سے خارج ہونے کے فتوے دینے والے خان صاحب کی اپنی گندی آڈیو سامنے آئیں تو موصوف کو دوسروں کے عیبوں پر پردہ ڈالنے کے حوالے سے قرآنی آیات یاد آ گئیں۔ عائلہ اور فریحہ نامی خواتین کے ساتھ اپنی گندی ترین گفتگو پر مبنی آڈیوز لیک ہونے کے بعد شرمندگی کا اظہار کرنے کے بجائے کپتان نے فرمایا کہ پاکستان کی اکثریتی آبادی پر مشتمل نوجوان نسل کو غلط پیغام دیا جا رہا ہے اور انہیں اخلاق باختگی پر اکسایا جا رہا ہے۔ یعنی خان صاحب کا موقف یہ ہے کہ ایک پرائی عورت کے ساتھ فون پر گروپ سیکس ڈسکس کرنا تو ہر گز قابل اعتراض نہیں لیکن ایسی واحیات گفتگو کی آڈیو لیک کرنا غلط ہے۔ یکن ناقدین کا کہنا ہے کہ اس حمام میں صرف خان صاحب ہی نہیں بلکہ ان کے دیگر ساتھی بھی ایک ایک کر کے ننگے ہو رہے ہیں۔ سینئر صحافی عمران شفقت نے اپنے وی لاگ میں انکشاف کیا ہے کہ خفیہ ایجنسیوں کے ہاتھ پنجاب کے ایک بڑے چوہدری کی ایسی آڈیو ریکارڈنگز لگ گئی ہیں جن میں وہ ایک خاتون کے ساتھ ویسی ہی باتیں کرتے سنائی دیتے ہیں جیسی کہ خان صاحب اپنی آڈیوز میں کرتے سنائی دیے تھے۔ عمران شفقت نے اپنے وی لاگ میں پنجاب کے اس بڑے چوہدری کا نام تو نہیں دیا لیکن یہ ضرور بتایا ہے کہ موصوف اپنی کم عمر دوسری بیوی کے ساتھ اس کی تین سہیلیوں نیہا، آمنہ اور علینا کے بارے میں گفتگو کرتے ہوئے گندے خیالات کا اظہار کر رہے ہیں۔ چوہدری موصوف کی گفتگو بھی انہی لائنز پر سنائی دیتی ہے

جن لائنز پر عمران خان عائلہ ملک کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے اس خواہش کا اظہار کر رہے تھے کہ وہ ان کی بہن کے ساتھ بھی مل جل کر اچھا ٹائم گزارنا چاہتے ہیں۔ جواب میں عائلہ نے کہا تھا کہ وہ اپنی بہن سے بات کریں گی لیکن اس کا ایک بوائے فرینڈ بھی ہے۔ اس پر کپتان موصوف نے کہا تھا کہ اس کو کون سا پتہ چلنا ہے۔ دوسری جانب اب یہ معلوم ہوا ہے کہ عمران شفقت نے پنجاب کی جس شخصیت کی آڈیوز کا ذکر کیا ہے وہ وزیر اعلیٰ پنجاب چوہدری پرویز الٰہی ہیں۔ گفتگو کے ٹرانسکرپٹ کے مطابق بڑے چوہدری کو لڑکیوں کے ریٹ بھی بتائے جا رہے ہیں اور یہ بھی بتایا جا رہا ہے کہ وہ کس کام کا کتنا معاوضہ وصول کرتی ہیں۔ ذرائع کا دعویٰ ہے کہ موصوف تقریبا ًروزانہ ہی فون پر ‘ڈرٹی ٹاک’ کرتے ہیں اور ان کے ذہن پر بھی اتنی ہی گندگی سوار رہتی ہے جتنی کے ان کے نئے قائد خان صاحب کے دماغ پر۔ تاہم ابھی تک یہ معلوم نہیں ہو پایا کہ پنجاب کے بڑے چوہدری کی یہ غلیظ آڈیوز کب لیک کی جائیں گی۔ لیکن ایک بات طے ہے کہ اگر یہ آڈیوز سامنے آگئیں تو موصوف گھر والوں اور باہر والوں دونوں کو منہ دکھانے کے قابل نہیں رہیں گے۔ باخبر ذرائع کا کہنا ہے کہ گجرات کے چوہدری خاندان میں پڑنے والی دراڑ کی بڑی وجہ سیاسی اختلافات کے علاوہ خاندانی اختلافات بھی ہیں جو پرویز الٰہی کی دوسری شادی کی وجہ سے پیدا ہوئے۔ یاد رہے کہ پرویز الٰہی کی پہلی اہلیہ چوہدری شجاعت حسین کی بہن

اور چوہدری ظہور الٰہی کی بیٹی ہیں۔ چوہدری شجاعت حسین اور چودھری پرویز الٰہی دو سگے بھائیوں چوہدری ظہور الٰہی اور چوہدری منظور الٰہی کے صاحبزادے ہیں۔ باوثوق ذرائع نے دعویٰ کیا ہے کہ چوہدری پرویز الٰہی نے 72 برس کی عمر میں ایک 28 سالہ طلاق یافتہ سے دوسری شادی کر رکھی ہے جس کے پہلے سے دو بچے ہیں۔ ماضی قریب میں وہ اسی اہلیہ کے ساتھ لندن کی سیر کرنے گئے تھے۔ لاہور کی رہائشی اس خاتون کا نام سائرہ چودھری ہے اور نیہا، آمنہ اور علینا کا شمار موصوفہ کی بہترین سہیلیوں میں ہوتا ہے۔