جاوید چوہدری نے قوم کو آئینہ دکھا دیا

لاہور (ویب ڈیسک) نامور کالم نگار جاوید چوہدری اپنے ایک کالم میں لکھتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔ہمارا آج کا سب سے بڑا مسئلہ نئے آرمی چیف کی تعیناتی اور عمران خان کا لانگ مارچ ہے‘ لوگ سارا دن ایک دوسرے سے پوچھتے رہتے ہیں نیا آرمی چیف کون ہو گا؟ صدر کے پاس 48 (1) کے تحت اختیار ہے یہ حکومت

Almarah Advertisement

کی کسی بھی ایڈوائس کو پندرہ دن اور پھر دس دن تک روک سکتا ہے چناں چہ یہ آرمی چیف کی تعیناتی 25 دن تک ڈیلے کر سکتا ہے۔کیا عارف علوی ایسا کریں گے اور عمران خان اسلام آباد کے بجائے راولپنڈی کیوں جا رہے ہیں؟ آپ ذرا سنجیدگی ملاحظہ کیجیے‘ دنیا کدھر جا رہی ہے اور ہم کس طرف دوڑ رہے ہیں‘ دنیا کے کیا کیا مسائل ہیں اور ہم مسائل کے ڈھیر پر بیٹھ کر کیا کر رہے ہیں؟ گوشت کو کوفتہ بناتے ہیں اور پھر کوفتے کو قیمے میں تبدیل کرنا شروع کر دیتے ہیں۔ایک حکومت لاتے ہیں‘ اس کے مخالفین کو غدار اور کرپٹ ثابت کرتے ہیں اور پھر ان ’’کرپٹ‘‘ اور ’’غداروں‘‘ کو نہلا دھلا کر کرسی اقتدار پر بٹھا دیتے ہیں اورپرانے کو سڑکوں کا رزق بنا دیتے ہیں‘ ہم نے دس سال سڑکوں کو آرام نہیں کرنے دیا‘ ہم دس سال سے ملک میں عدم استحکام بو اور کاٹ رہے ہیں اور اس کاشت کاری کے بعد ایک دوسرے سے یہ بھی پوچھ رہے ہیں ہم ترقی کیوں نہیں کر رہے؟ ہم کشکول لے کر در در کیوں پھر رہے ہیں؟مجھے بعض اوقات یہ ملک ایک ایسی گاڑی محسوس ہوتا ہے جسے ہم نے راؤنڈ اباؤٹ پر چلا چلا کر کھٹارہ بنا دیا‘ ہم میٹر دیکھتے ہیں توہم ہزاروں کلومیٹر سفر کر چکے ہیں لیکن جب باہر دیکھتے ہیں تو ہم آج بھی وہیں کھڑے ہیں جہاں سے ہم چلے تھے لہٰذا ٹھنڈے دل سے سوچیے جو قوم 75 برسوں میں آرمی چیف کی تعیناتی کا فول پروف سسٹم نہیں بنا سکی‘ جو ہر تین سال بعد تعیناتی کے ہیجان میں مبتلا ہو جاتی ہے وہ دنیا کا کیا مقابلہ کرے گی‘ وہ کتنی دیر سلامت رہ لے گی چناں چہ پیرا شوٹ کھولیں‘ زمین اب 200 فٹ سے زیادہ دور نہیں ہے۔