عمران خان سرخرو۔۔۔۔ اسلام آباد ہائیکورٹ سے بڑے ریلیف کی خبر آگئی

اسلام آباد (ویب ڈیسک) اسلام آباد ہائی کورٹ نے چیئرمین پی ٹی آئی، سابق وزیرِ اعظم عمران خان کے خلاف مقدمے سے سنگین ترین دفعہ ختم کرنے کا حکم دے دیا۔اسلام آباد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس اطہر من اللّٰہ کی سربراہی میں 2 رکنی بینچ نے درخواست کی سماعت کی۔چیف جسٹس نے

Almarah Advertisement

استفسار کیا کہ یہ بتائیں کہ جے آئی ٹی نے اس کیس میں کیا رائے دی ہے؟پراسیکیوٹر نے بتایا کہ جےآئی ٹی کی یہی رائے ہے کہ اس کیس میں شرپسندی کی دفعہ بنتی ہے۔عمران خان کے وکیل نے عدالت کو بتایا کہ عمران خان نے ایکشن لینے کی بات کی جو لیگل ایکشن کی بات تھی، آئی جی پولیس اور ڈی آئی جی پر بھی کیس کرنے کی بات کی گئی، درخواست متاثرہ افراد کی طرف سے آنی چاہیے تھی کہ وہ اس بیان سے خوفزدہ ہوئے، یہ کمپیوٹر ٹائپ درخواست تحمل سے لکھی گئی جس کے پیچھے کوئی ماسٹر مائنڈ ہے، اس سنگین دفعہ کا مقدمہ خوف اور دہشت کی فضا پیدا کرنے پر ہی بن سکتا ہے، محض ایسی فضا پیدا ہونے کے امکان پر مقدمہ نہیں بن سکتا، عمران خان پر بنا مقدمہ عالمی سطح پر کیا تاثر چھوڑے گا؟چیف جسٹس اطہر من اللّٰہ نے کہا کہ اُس پر نہیں جاتے، ابھی مقدمے تک رہتے ہیں۔عمران خان کے وکیل نے کہا کہ عمران خان نے ایک ریلی میں بات کی جس پر مقدمہ بنا، تقریر پر سنگین مقدمہ قانون کو مذاق بنانے جیسا ہے۔اسپیشل پراسیکیوٹر نے عدالت کو بتایا کہ عمران خان کے خلاف مقدمے سے سیکشن 186 نکال دی گئی ہے۔عمران خان کے وکیل نے کہا کہ جو سیکشن نکال دینی چاہیے تھی وہ ختم نہیں کی گئی، عدالت نے چالان داخل کرانے سے روکا تھا مگر پولیس نے چالان تیار کر رکھا ہے۔چیف جسٹس اطہر من اللّٰہ نے کہا کہ چالان ٹرائل کورٹ میں جمع نہیں کرایا گیا، یہی آرڈر بھی تھا۔پراسیکیوٹر نے کہا کہ ان ہی حقائق پر تفتیشی افسر نے آئی جی سے دو بار کہا کہ مجھے کیس سے الگ کیا جائے۔عدالتِ عالیہ نے عمران خان کے خلاف مقدمہ خارج کرنے کی درخواست پر فیصلہ محفوظ کر لیا۔اسلام آباد ہائی کورٹ نے کچھ دیر بعد محفوظ کیا گیا فیصلہ سناتے ہوئے عمران خان کے خلاف مقدمے سے سنگین دفعہ ختم کرنے کا حکم دے دیا۔