مداح افسردہ! نامور بھارتی اداکارہ نے اپنی زندگی کا خاتمہ کر لیا، وجہ کیا بنی؟

ممبئی (نیوز ڈیسک)بھارتی معروف اداکارہ پاؤلین جیسیکا نے اپنی زندگی کا خاتمہ کر لیا ہے ۔ تفصیلات کے مطابق تامل فلموں میں دیپا کے نام سے شہرت حاصل کرنے والی اداکارہ کئی سالوں سے چنئی میں اکیلی رہائش پذیر تھیں ۔میڈیا اطلاعات کے مطابق دیپا کے گھر والے انہیں کافی ٹائم سے مسلسل کالز کر رہے تھے جس کو وہ جواب نہیں دے رہی تھی ۔نجی ٹی وی کے مطابق جب دیپا نے لوگوں کی کالیں اٹھانا

Almarah Advertisement

بند کر دیں تو پربھاکرن نامی ان کا دوست اداکارہ کی خیریت معلوم کرنے گھر پہنچ گیا۔پربھاکرن نے پولیس کو اطلاع دی ۔پولیس فلیٹ میں داخل ہوئی تو دیپا کی نعش برآمد ہوئی۔پولیس کے مطابق اداکارہ کی نعش کے ساتھ یہ تحریر بھی ملی ہے جس میں انہوں نے موت کا ذمہ دار خود کو ہی قرار دیا ہے، پولیس نے معاملے کی تفتیش شروع کردی ہے۔دوسری جانب بالی ووڈ کی ڈراما ادکارہ نیشی سنگھ 50 برس کی عمر میں چل بسیں۔وہ کئی برسوں سے شدید بیمار تھیں اور جسمانی طور پر مفلوج تھیں، بیماری کے آخری حملے نے شدید متاثر کیا۔نشی سنگھ نے ٹی وی کے مشہور ڈراموں عشق باز، قبول ہے اور تینالی راما میں کردار ادا کیا تھا۔انہوں نے پسماندگان میں اپنے شوہر اور دو بچوں کو چھوڑا ہے جبکہ ان کی فیملی شدید طور پر مالی بحران میں مبتلا ہے۔ان کے شوہر نے میڈیا سے گفتگو میں کہا ہے کہ ایک روز قبل ہی ہم نے ان کا جنم دن منایا تھا اور وہ اس پر بہت خوش تھیں۔نشی سنگھ کی موت پر شوبز انڈسٹری سے وابستہ مختلف شخصیات نے گہرے دکھ اور افسوس کا اظہار کیا ہے۔دوسری جانببالی ووڈ کی 1990 کے عشرے کی معروف اداکارہ عائشہ جھلکا نے انکشاف کیا ہے کہ ساتھی اداکارہ دویا بھارتی کی موت کے بعد ان کا فلم کے لیے ڈبنگ کرنا مشکل ہوگیا تھا۔ اپنے ایک حالیہ انٹرویو کے دوران عائشہ جھلکا نے اپنے ابتدائی دور میں دیگراداکاراؤں سے اپنے اختلافات اور دوستی کا ذکر کیا۔ انہوں نے بتایا کہ اس زمانے میں ان کی ساتھی اداکارہ دیویا بھارتی سے کافی گہری دوستی تھی اور دیویا نے اپنے شوہر ساجد ناڈیا والا سے اصرار کر کے انہیں 1993 کی فلم ’وقت ہمارا ہے‘ میں شامل کروایا۔یاد رہے کہ دونوں نے فلم رنگ میں اکٹھے کام کیا تھا،آنجہانی اداکارہ دیویا بھارتی جنکا 1993 میں ممبئی میں اپنے فلیٹ کی بالکونی سے گر کر پْراسرار انداز میں انتقال ہوا تھا، عائشہ جھلکا نے ان کے بارے میں گفتگو کے دوران بتایا کہ کس طرح وہ آپس میں چیزیں شیئر کیا کرتی تھیں۔دیویا کو یاد کرتے ہوئے انہوں نے بتایا کہ جب ان کی موت کی اطلاع آئی،تو میں افسوس اور صدمے کے باعث بے حس و حرکت ہو گئی۔انہوں نے کہا کہ بعد میں جب فلم رنگ کی ڈبنگ کی گئی تو متعدد بار اس کی شوٹنگ منسوخ کرنا پڑی کیونکہ میں اس قابل نہیں ہوتی تھی کہ اس کی تکمیل کرواسکوں، میں بار بار رونے لگتی تھی۔عائشہ جھلکا کا کہنا تھا کہ ہم دونوں میں دوستی کے ساتھ کبھی کبھی چھوٹی موٹی لڑائی ہوتی تو ڈائریکٹر یا پروڈیوسر سے شکایت ہوتی، لیکن میں دیویا کی پرستار تھی اور وہ بھی میرے بارے میں ایسے ہی جذبات رکھتی تھی۔انہوں نے بتایا کہ وہ کہا کرتی تھی کہ وہ مجھ سے پیار کرتی ہے، ہم پڑوسی بھی تھے اور آپس میں ایک دوسرے کے بہت قریب تھے۔