Categories
آرٹیکلز

اچھا تو یہ بات ہے : (ن) لیگ کا سوشل میڈیا پی ٹی آئی کے سوشل میڈیا سے پیچھے کیوں ہے ؟ 6 ستمبر کو کیا ہوا تھا ؟ عمرچیمہ کی خصوصی رپورٹ

اسلام آباد (ویب ڈیسک)نامور صحافی عمر چیمہ اپنی ایک رپورٹ میں لکھتے ہیں ۔۔۔۔۔ 6 ستمبر کو مسلم لیگ ن کے سوشل میڈیا کے سربراہ کو ایک مشورہ ملاجس نے بیانیہ کے محاذ پر ناکامی کے باوجود پارٹی قیادت کی توجہ حاصل نہیں کی۔ پارٹی کے سوشل میڈیا کے سربراہ عاطف رؤف نے ٹویٹ کیا

کہ جو بھی ہماری ٹرینڈنگ ٹیم کا حصہ ہے یا اس کا حصہ بننا چاہتا ہے وہ اس ٹرینڈ میں ٹویٹ کرے۔ ان کے جوابات میں سے ایک سبق آموز تھا۔ ’سب سے پہلے آپ کو ایک ٹیم بنانی چاہئے۔ آپ (ن) لیگ کے پنجاب اسمبلی میں 165 ارکان ہیں۔ اسی طرح ایم این ایز اور سینیٹرز بھی ہیں۔ اگر ان میں سے ہر ایک آپ کو 100 رضاکار فراہم کرتا ہے تو آپ ایک اچھی ٹیم بنا سکتے ہیں۔ اس کے علاوہ اگر یونین کونسل کی سطح پر پارٹی کے عہدیداران بھی شامل ہوجائیں تو آپ کو مدد کے لئے ارد گرد دیکھنے کی ضرورت نہیں ہوگی‘۔ مسلم لیگ ن سوشل میڈیا کے ذریعے حمایت کو متحرک کرنے اور بیانیے کو اندرونی بنانے میں پی ٹی آئی سے بہت پیچھے ہے۔ پارٹی کے ہمدردوں کو بیانیہ کے محاذ پر ہونے والے اس نقصان پر تشویش بڑھ رہی ہے لیکن قیادت پریشان نظر نہیں آتی۔سوشل میڈیا کی حرکیات کو سمجھنا تو دور کی بات ہے وہ مسلم لیگ ن کے سرکردہ رہنما میاں نواز شریف کے ٹوئٹر اکاؤنٹ کی تصدیق نہیں کر سکے ۔ یہ پی ٹی آئی کے سوشل میڈیا اکاؤنٹس کے برعکس ہے۔ نہ صرف عہدیداروں کے اکاؤنٹس کی تصدیق کی جاتی ہے، پی ٹی آئی کے سٹی چیپٹرز کے ٹوئٹر ہینڈلز نے بھی تصدیق حاصل کر لی ہے۔ مسلم لیگ ن کے سوشل میڈیا کے ایک عہدیدار نے کہا کہ پی ٹی آئی جب حکومت میں تھی تو پاکستان ٹیلی کمیونیکیشن اتھارٹی (پی ٹی اے) کے ذریعے ایسا کر سکتی تھی۔ تاہم پی ٹی اے کے ایک عہدیدار نے وضاحت کی کہ

ریگولیٹر صرف حکومت میں عہدے پر فائز افراد کے اکاؤنٹس کی تصدیق کی سفارش کرتا ہے۔ مسلم لیگ ن کے ایک ذریعے نے بتایا کہ ٹوئٹر نے نواز شریف کے اکاؤنٹس کی تصدیق کی متعدد درخواستوں پر غور نہیں کیا جس کی وجہ سوشل میڈیا کمپنی کو معلوم ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہم نے پانچ سے زیادہ بار درخواستیں بھیجی ہیں۔ ایک اور امیدوار خرم دستگیر ہیں جن کی تصدیق کی درخواست بھی زیر التوا ہے۔ حمزہ شہباز وزیراعلیٰ بننے کے بعد ہی اپنے اکاؤنٹ کی تصدیق کرانے میں کامیاب ہوسکے۔ اسی طرح عطا تارڑ پر قسمت کی دیوی ان کے حمزہ کی کابینہ میں شامل ہونے کے بعد مسکرائی اور تصدیق حاصل کرلی۔ پس منظر میں ہونے والی گفتگو سے سوشل میڈیا کے تئیں قیادت کی بے حسی پر مسلم لیگ (ن) کی صفوں اور فائلوں میں مایوسی کا پتہ چلتا ہے جو ایک ایسے وقت میں بیانیہ کے محاذ پر میدان لڑائی بن چکا ہے جب 14 سے 34 سال کی عمر کے تقریباً 70 فیصد نوجوان سوشل میڈیا کے ذریعے معلومات حاصل کرتے ہیں۔ وہ مسلم لیگ ن کی خراب کارکردگی کے پیچھے دو بڑی وجوہات کی نشاندہی کرتے ہیں۔ یہ قیادت کی ترجیحات میں شامل نہیں ہے اور شریف خاندان میں بہت زیادہ رہنما ہیں۔ لندن میں پارٹی کے ایک ذرائع نے کہا کہ ایسا نہیں ہے کہ پارٹی کے پاس فنڈز کی کمی ہے، یہ وہ خواہش ہے جس کی ہم میں کمی ہے۔ ایک بار پھر ایسا نہیں ہے کہ قصور صرف پاکستان میں قیادت کا ہے، میاں نواز شریف بھی اس میں زیادہ دلچسپی

نہیں رکھتے۔ ایک ذریعے نے بتایا کہ کئی ہمدردوں نے پارٹی کے سپریم لیڈر کو اطلاع دینے کی کوشش کی ہے۔ اگرچہ بڑے شریف صاحب بات چیت میں اس حقیقت کو تسلیم کرتے ہیں، یہ عملی نتیجہ ظاہر نہیں کرتا جو کسی کی سنجیدگی کا صحیح پیمانہ ہے۔ اگر عمران خان کو سیاسی طور پر کسی بھی موقع سے نقصان پہنچتا ہے تو یہ ان کی اپنی غلطی کی وجہ سے ہو گا جیساکہ مسلم لیگ ن اس کا کریڈٹ نہیں لے سکتی۔ ایک اور اہم عنصر جس کی نشاندہی کی گئی وہ شریف خاندان کے اندر قیادت کے حوالے سے کشمکش ہے۔ اگرچہ مریم نواز کافی آواز والی ہیں لیکن وہ نہ تو اپنے ارادے واضح کرنے میں آزاد ہیں اور نہ ہی ان کے پاس اپنے بیانیے کی بازگشت کے لیے باوقار ٹیم ہے۔ شہباز شریف پارٹی سربراہ ہونے کے باوجود ایک ایسا لیڈر بننے کے لیے جدوجہد کر رہے ہیں جو مسابقتی بیانیہ پیش کر سکے۔ اس وقت، مختلف سوشل میڈیا ٹیمیں ان لیڈروں کی کارکردگی کو پیش کرنے کے لیے کام کر رہی ہیں جو انہیں فنڈ دیتے ہیں۔ اگر ٹوئٹر کو سوشل میڈیا پر کسی پارٹی کی موجودگی کا فیصلہ کرنے کے لیے گائیڈ کے طور پر لیا جائے تو پی ٹی آئی مختلف معاملات پر اپنا نقطہ نظر اجاگر کرنے کے لیے روزانہ کی بنیاد پر ٹرینڈز کامیابی سے چلاتی ہے۔ دوسری جانب مسلم لیگ ن اس محاذ پر اکثر ناکام رہتی ہے۔ اس بات کا اعتراف پارٹی کے سوشل میڈیا سربراہ عاطف رؤف نے بھی کیا ہے۔

دی نیوز سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ن لیگ فعالیت میں پی ٹی آئی سے آگے ہے لیکن رجحان سازی (ٹرینڈ میکنگ) میں کامیابی حاصل کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس میں ناکامی اس وجہ سے ہے کہ ہمارے پاس نامیاتی موجودگی ہے جبکہ پی ٹی آئی پیڈ ماڈل کے ذریعے کام کر رہی ہے۔ انہوں نے وضاحت کی کہ آپ نے خبر پڑھی ہوگی کہ پنجاب اور کے پی میں پی ٹی آئی کی حکومتوں نے اس مقصد کے لیے یونین کونسل کی سطح تک انٹرنز کی خدمات حاصل کی ہیں۔ دی نیوز نے نوٹ کیا کہ مسلم لیگ ن کے کارکنان اور ہمدرد اکثر ٹوئٹر پر پارٹی کے سوشل میڈیا سیل کے خلاف اپنے تحفظات کا اظہار کرتے پائے جاتے ہیں۔ان کی اکثریت ن لیگ کے سوشل میڈیا کی وجہ سے نہیں بلکہ تحریک انصاف کی تقسیم کی سیاست کی مخالفت کی وجہ سے سرگرم ہے۔ ایک سوال کے جواب میں عاطف نے کہا کہ جو ان کے بارے میں تشویش ظاہر کرتے ہیں درحقیقت بعض اوقات ʼغیر جانبدار رہنے کی کوشش کرتے ہیں اور قیادت کو نشانہ بناتے ہیں۔ ایک اور سوشل میڈیا عہدیدار نے پارٹی لیڈروں کی جانب سے بیانیہ کی کمی کو رجحان سازی میں ناکامی کی ایک بڑی وجہ قرار دیا۔ انہوں نے کہا کہ ہم ٹرینڈز کو کامیابی کے ساتھ نہیں چلا سکتے جب تک کہ کچھ معاملات پر قیادت کا کوئی واضح پالیسی/بیان نہ ہو۔ اگرچہ مسلم لیگ ن ٹوئٹر پر ناقص کارکردگی کا مظاہرہ کرنے والی ہے، دوسرے سوشل میڈیا پلیٹ فارمز جیسے انسٹاگرام، ٹک ٹاک اور یوٹیوب پر اس کی موجودگی نہ ہونے کے برابر ہے جہاں ایک بار پھر پی ٹی آئی کا راج ہے۔ ہفتوں پہلے دی نیوز نے ایک وزیر سے پوچھا تھا کہ سوشل میڈیا پر پارٹی کی جانب سے مناسب توجہ کیوں نہیں دی جاتی؟ تو ان کا جواب مزاحیہ تھا ’لوگ جانتے ہیں کہ کیا ہو رہا ہے اور کون کیا کر رہا ہے‘۔ پارٹی کے ایک اور رہنما نے اس نقطہ نظر کو نظر انداز کردیا۔