Categories
پاکستان

کیا پانچویں کائناتی قوت کا ایک اور اشارہ مل گیا؟؟؟

کراچی(ویب ڈیسک) اہرین کی عالمی ٹیم نے ایک اہم بنیادی ذرّے ’’ڈبلیو بوسون‘‘ (W Boson) کی درست ترین کمیت معلوم کرلی ہے جو ہمارے اب تک کے بہترین اور محتاط ترین تخمینوں سے 0.1 فیصد زیادہ ہے؛ جبکہ اس پیمائش میں غلطی کا امکان بھی صرف 0.01 فیصد کے لگ بھگ ہے۔

بعض سائنسدان اس فرق کو ’’پانچویں کائناتی قوت‘‘ کا ایک اور اشارہ قرار دے رہے ہیں۔ اس پیمائش کا اعلان گزشتہ ہفتے امریکا کی ’’فرمی نیشنل ایکسلریٹر لیبارٹری‘‘ المعروف ’’فرمی لیب‘‘ میں تقریباً بیس سال سے جاری ایک عالمی منصوبے ’’سی ڈی ایف کولیبوریشن‘‘ کی جانب سے کیا گیا ہے۔ سی ڈی ایف کولیبوریشن میں 23 ملکوں سے 54 تحقیقی اداروں کے 400 سائنسدان شامل ہیں جس کی تازہ ترین تحقیق کی تفصیل ریسرچ جرنل ’’سائنس‘‘ کے تازہ شمارے میں شائع ہوئی ہے۔ ڈبلیو بوسون کی کمیت میں سامنے آنے والا یہ فرق بظاہر بہت معمولی ہے لیکن ذرّاتی طبیعیات (پارٹیکل فزکس) میں اتنا اہم ہے کہ اگر مزید تجربات سے اس کی حتمی تصدیق ہوگئی تو ذرّاتی طبیعیات کے مروجہ فریم ورک ’’اسٹینڈرڈ ماڈل‘‘ میں بڑی تبدیلی بھی آسکتی ہے۔ بتاتے چلیں کہ پارٹیکل فزکس میں اسٹینڈرڈ ماڈل کو تقریباً پچھلے 50 سال سے ایک اہم نظریئے کا مقام حاصل ہے۔ اس کے تحت چار کائناتی قوتوں میں سے تین (برقی مقناطیسی قوت، مضبوط نیوکلیائی قوت اور کمزور نیوکلیائی قوت) یکجا کی جاچکی ہیں۔ (البتہ چوتھی اور سب سے اہم قوت (ثقل/ گریویٹی) باقی تین قوتوں کے ساتھ یکجا نہیں کی جاسکی۔)