Categories
کھیل

گمنامی سے شہرت ، مشکلات اور پھر عروج تک کا سفر : شعیب اختر کی زندگی کے ان سنے حقائق

لاہور(ویب ڈیسک) پنڈی ایکسپریس کہلانے والے پاکستان کے مایہ ناز فاسٹ باﺅلر شعیب اختر دنیائے کرکٹ میں تیز ترین باؤلنگ کا ریکارڈ اپنے نام رکھتے ہیں۔ انہوں نے اپنے کریئر میں کئی کارہائے نمایاں سرانجام دیئے جن کی بدولت وہ کرکٹ کی دنیا کے چند ممتاز ترین کھلاڑیوں میں شمار ہوتے ہیں

مگر کیا آپ جانتے ہیں کہ شعیب اختر ایک ایسی بیماری میں مبتلا ہیں کہ ہر میچ سے قبل ان کے گھٹنوں سے خون اور پانی نکالنا پڑتا تھا؟ شعیب اختر نے سب سے پہلے یہ انکشاف چند سال قبل ایک بھارتی ٹی وی شو میں کیا تھا اور اب اپنے یوٹیوب چینل پر پوسٹ کی گئی ایک ویڈیو میں وہ اس حوالے سے تفصیل اپنے مداحوں کو بتاتے ہیں۔ اس بھارتی ٹی وی شو میں پنڈی ایکسپریس شو کے شرکاءکو کبھی ہمت نہ ہارنے کا درس دیتے ہوئے اپنی مثال پیش کرتے ہیں اور کہتے ہیں ’ میرے پہلے ٹیسٹ میچ کے بعد مجھے ڈاکٹروں کے پاس لے جایا گیا اور انہوں نے کہا کہ میرے پاس صرف دو سال ہی بچے ہیں۔ ڈاکٹر ہر میچ سے پہلے اور بعد میں میرے گھٹنوں سے خون اور پانی نکالتے تھے۔ میرے ساتھی کرکٹرز خیال کرتے تھے کہ شاید میں کسی کلب میں ہوتا ہوں لیکن حقیقت میں اس وقت میں ہسپتال میں ہوتا تھا اور ڈاکٹر میرے گھٹنوں سے پانی اور خون نکال رہے ہوتے تھے۔ ‘اور یہ طریقہ انتہائی تکلیف دہ ہوتا تھا ۔