قومی کرکٹ ٹیم کے ہر کھلاڑی پر خطرے کےسائے منڈلانے لگے،اہم فیصلوں کا اعلان ہو گیا

لندن (ویب ڈیسک)قومی کرکٹ ٹیم کی مایوس کن کارکر دگی پر پر قومی ٹیم کے ہیڈ کوچ مکی آرتھر نےوارننگ جاری کرتے ہوئے تمام پلیئرزکوبتا دیا ہےکہ کسی کی جگہ بھی محفوظ نہیں ،اگر کوئی تیس برس سے زائد العمر ہے تو اسے خود میں بہتری لانا ہوگی ، ورنہ یہ بہترین موقع ہے کہ نئے چہرے سامنے لائے جائیں۔تفصیلات کے مطابق پاکستان اور انگلینڈ کے درمیان میچ کے حوالے سےپریس کانفرنس کرتے ہوئے قومی ٹیم کے ہیڈ کوچ مکی آرتھر کا واضح الفاظ میں کہنا تھا کہ اگر کچھ کھلاڑیوں کی کارکردگی میں بہتری نہ آئی تو انہیں ٹیم سے اخراج کیلئے تیار ہو جانا چاہئے کیونکہ پاکستانی ٹیم کو ورلڈ کپ کیلئے کوالیفائی کرنے کی خاطر رینکنگ میں بہتری کا سخت چیلنج درپیش ہے۔

ہیڈ کوچ نے خاص کر سینئر بلے باز محمد حفیظ کی کارکردگی کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ انہوں نے متبادل کھلاڑیوں کیلئے پاکستان کی ڈومیسٹک کرکٹ کی جانب دیکھنا شروع کر دیا ہے۔ مکی آرتھر کا کہنا تھا کہ انہوں نے تمام کھلاڑیوں کواس بات سے آگاہ کر دیا ہے کہ اب ٹیم میں کسی بھی کھلاڑی کی جگہ محفوظ نہیں اور خاص کر کوئی تیس برس سے زائد العمر ہے تو اسے اپنی کارکردگی میں بہتری کی کوشش شروع کر دینی چاہئے ورنہ دوسری صورت یہی ہے کہ نئے خون کو سامنے لانے کی سعی کی جائے۔

ان کا کہنا تھا کہ ون ڈے ٹیم میں کوئی بھی کھلاڑی سو فیصدی محفوظ نہیں اور ہر کھلاڑی خود کو نوٹس پر محسوس کرے کیونکہ انہوں نے ایسے کھلاڑیوں پر نگاہ ڈالنا شروع کر دی ہے جو موجودہ کھلاڑیوں کی جگہ کھیل کر اپنا موثر کردار نبھا سکیں۔

انہوں نے کہا وہ ایک ایسی ٹیم بنانے جا رہے ہیں جو دو سال میں حریفوں سے مقابلے کیلئے تیار ہو جائے گی اور ہر کھلاڑی کو کھلی دعوت ہے کہ وہ آگے بڑھ کر ملنے والے مواقع کا فائدہ اٹھائے ورنہ پھر سادہ سی بات یہ ہے کہ ان کی جگہ دوسرے کھلاڑی سامنے لائے جائیں گے جو آگے بڑھنے کے اس عمل میں ساتھ دے سکیں۔

(ز،ع)