لندن : مسجد میں نماز تراویح پڑھ کر باہر نکلنے والوں پر دہشت گردانہ حملہ : وزیراعظم تھریسا مے نے قابل تحسین قدم اٹھا لیا

لندن (ویب ڈیسک) مسجد کے دورے کے دوران وزیراعظم ٹریزا مے نے صورت حال کا جائزہ لینے کے بعد کہا کہ اُن کی تمام ہمدردیاں متاثرہ افراد اور اُن کے خاندانوں کے ساتھ ہیں۔ اس موقع پر فِنزبری مسجد کی انتظامی کمیٹی کے چیئرمین محمد کوزبار نے اس حملے کو ایک بزدلانہ کارروائی قرار دیا۔ کوزبار نے اس بات کی شکایت بھی کی کہ برطانیہ کا مرکزی میڈیا دانستہ طور پر اس حملے کو دہشت گردانہ کارروائی قرار دینے سے اجتناب کر رہا ہے۔

مذکورہ حملے کی چھان بین جاری ہے۔ حملے میں ایک شخص ہلاک اور دیگر آٹھ زخمی ہوئے ہیں۔ پولیس نے واضح کیا ہے کہ اس حملے میں کوئی اور شخص ملوث دکھائی نہیں دیتا۔ پولیس کے مطابق حملے کی نوعیت کو دیکھتے ہوئے نگرانی اور پولیس کی مدد کرنے والے ذرائع کا استعمال شروع کر دیا گیا ہے۔ ان ذرائع کے استعمال کے تناظر میں پولیس کا کہنا ہے کہ یہ انتظامات ماہِ رمضان اور عید کے حوالے سے کیے گئے ہیں۔جس وین سے مسجد پر حملہ کیا گیا تھا، اُسے وقوعے کے مقام سے پولیس نے دوپہر کے بعد ہٹا دیا ہے۔ پولیس کی اعلیٰ خاتون افسر کریسیڈا ڈِک کا کہنا ہے کہ آنے والے دنوں میں مسلم کمیونٹی کی سلامتی کے لیے خصوصی انتظامات کیے جا رہے ہیں۔لندن کے میئر صادق خان نے مسجد پر حملے کے بعد قریبی آبادی کے لوگوں کی جانب سے مسلمانوں کی مدد کرنے اور حملہ آور کو پکڑنے کے عمل کو شاندار قرار دیا۔ اُنہوں نے مسجد کے امام کی بھی تعریف کی کہ اُنہوں نے حملہ آور کو پکڑنے کے بعد دوسرے مسلمانوں کے سخت ردعمل سے بچانے میں مرکزی کردار ادا کیا۔ اس موقع پر صادق خان نے یہ بھی کہا کہ لندن انتظامیہ نفرت انگیز جرائم کے حوالے سے ’برداشت‘ کا رویہ اپنائے ہوئے ہے۔(ش س م۔ ن)

 

اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے

آپ اس خبر پر دوبارہ رائے نہیں دے سکتے - شکریہ

اپنی قیمتی رائے دینے کا شکریہ

Loading...
loading...