علامہ اقبال کی ایمانداری

 پٹنہ بہار کے قریب ایک جاگیر کا مقدمہ پٹنہ کے مشہور وکیل سی آرداس کے پاس آیا‘ اس مقدمے کی بعض دستاویزات فارسی میں تھیں جن کا خلاصہ انگریزی میں عدالت کے سامنے پیش ہونا تھا‘ اس کام کےلئے سی آر داس نے ڈاکٹر علامہ اقبال کی خدمات حاصل کیں‘ ڈاکٹر صاحب نے راتوں رات کام ختم کر کے کاغذات سی آر داس کو دے دیئے‘ وہ بہت حیران ہوئے‘ کہنے لگے ‘ یہ آپ نے کیا کیا‘ یہ کام تو خاصہ پیچیدہ اور دیر طلب تھا‘ اس کا مشاہیرہ بھی ایک ہزار روپیہ یومیہ تھا‘ آپ دو چار دن کرتے تا کہ دو چار ہزار فیس بھی بنتی‘ علامہ نے سکون سے جواب دیا ‘ مسٹر داس‘ میرے رسول صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ہے ‘ مسلمان پر وہ اجرت حرام ہے جو کام کو بے کام کو بے ضرورت لمبا کر کے لی جائے۔